امریکا: مہنگائی نے 40 سالہ ریکارڈ توڑ دیا

بائیڈن انتظامیہ نے بھی تشویش ظاہر کردی

امريکا ميں مہنگائی نے 40 سالہ ریکارڈ توڑ دیا۔ وال اسٹريٹ کا کہنا ہے کہ مہنگائی کی شرح گزشتہ سال کی نسبت 6.8 فيصد بڑھ چکی ہے، نومبر پرائس انڈيکس پر بائيڈن انتظاميہ نے بھی تشويش ظاہر کردی۔ اعداد و شمار بتارہے ہيں کہ 1982ء کے بعد 2021ء مہنگا ترين سال ہے۔

دنيا کا سب سے طاقتور ملک امريکا مہنگائی کے آگے کمزور پڑگيا، افراط زر 40 سال کی بلند ترين سطح پر چلی گئی۔ نومبر پرائس انڈيکس بتارہا ہے کہ اشياء کی قيمتوں ميں 6.8 فيصد اضافہ ہوچکا ہے۔

رپورٹ کے مطابق درجنوں اشياء کی قيمتيں بڑھ چکی ہيں، گيسولين اور گوشت کی قيمتوں ميں اضافہ نماياں ہيں، سبزياں اور پالتوں جانوروں کے استعمال کی چيزيں بھی مہنگی ہوئی ہيں۔

صدر جو بائيڈن نے افراط زر کی اس چھلانگ پر امريکيوں کو يقين دلايا ہے کہ توانائی کی مصنوعات ميں مہنگائی کم کررہے ہيں، آنے والے ہفتوں اور مہينوں ميں يہ نماياں ہوں گی۔ اُن کا کہنا ہے کہ افراط زر کا مسئلہ ساری دنيا ميں ہے۔

امریکا میں اس سے قبل 40 سال پہلے 1982ء ميں آخری بار ريکارڈ افراط زر ہوا تھا کہ جب صدر ريگن کی انتظاميہ اقتدار ميں تھی۔





Source link

About admin

Check Also

آنے والا لانگ مارچ اور دھرنا آخری ہوگا،عمران خان

چیئرمین تحریک انصاف عمران خان کا کہنا ہے کہ میرا آنے والا لانگ مارچ اور …

Leave a Reply

Your email address will not be published.